poetry about teachers personality in urdu

 



یہ جو ہماری درسگاہوں میں استاد ہوتے ہیں

حقیقت میں یہی قوم کی بنیاد ہوتے ہیں


ادب تعلیم کا ظہار ہے زیبر ہے جبانی کا 

وہی شاغیرد ہے وہی خدمت اے استاد کرتے ہے




دیکھا نہ كحکن کوئی فرہاد کے بغیر

آتا نہی ہے فن کوئی استاد کے بغیر



جنکے کردار سے آتی ہے صداقت کی مہک

اُن کی تدریس سے پتھر بھی پگھل سکتے ہے



اب مجھے مانے نہ مانے اے حافظ

مانتے ہے سب میرے استاد کو



کچھ تڑپنے کا سسکنے کا مجا لینے دے

اتنی تذیل میرے قتل میں جلاد نہ کر




استاد کے احسان کا کر شکر منیر آج

کی اہل اے سخن نے تیری تعریف بڑی بات




شاگرد ہیں ہم میر سے استاد کے شریک

استادوں کا استاد ہے استاد ہمارا




یاد رکھیں ایک کتاب ایک قلم ایک بچہ

اور ایک استاد دنیا بدل سکتا ہے




Post a comment

0 Comments